الاثنين 15 جمادى آخر 1443 هـ
آخر تحديث منذ 2 ساعة 6 دقيقة
×
تغيير اللغة
القائمة
العربية english francais русский Deutsch فارسى اندونيسي اردو Hausa
الاثنين 15 جمادى آخر 1443 هـ آخر تحديث منذ 2 ساعة 6 دقيقة

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته.

الأعضاء الكرام ! اكتمل اليوم نصاب استقبال الفتاوى.

وغدا إن شاء الله تعالى في تمام السادسة صباحا يتم استقبال الفتاوى الجديدة.

ويمكنكم البحث في قسم الفتوى عما تريد الجواب عنه أو الاتصال المباشر

على الشيخ أ.د خالد المصلح على هذا الرقم 00966505147004

من الساعة العاشرة صباحا إلى الواحدة ظهرا 

بارك الله فيكم

إدارة موقع أ.د خالد المصلح

×

لقد تم إرسال السؤال بنجاح. يمكنك مراجعة البريد الوارد خلال 24 ساعة او البريد المزعج؛ رقم الفتوى

×

عفواً يمكنك فقط إرسال طلب فتوى واحد في اليوم.

فرض نماز میں رکوع کرتے وقت دعا کرنے کا کیا حکم ہے؟

مشاركة هذه الفقرة

فرض نماز میں رکوع کرتے وقت دعا کرنے کا کیا حکم ہے؟

تاريخ النشر : 9 ربيع آخر 1438 هـ - الموافق 08 يناير 2017 م | المشاهدات : 1149

فرض نماز میں رکوع کرتے وقت دعا کرنے کا کیا حکم ہے؟

ما حکم الدعاء عند الرکوع فی صلاۃ الفرض؟

حامداََ و مصلیاََ۔۔۔

اما بعد۔۔۔

اللہ کی توفیق سے ہم آپ کے سوال کا جواب یہ دیتے ہیں:

جہاں تک رکوع میں دعا کرنے کی بات ہے تو اس کے بارے میں امام مسلمؒ نے اپنی کتا ب میں حضرت ابن عباسؓ کی حدیث نقل کی ہے کہ آپ نے ارشاد فرمایا:رکوع میں ربِ ذوالجلال کی تعظیم بیان کرو اور سجدو ں میں خوب دعا مانگوکہ سجدوں میں دعا قبول ہوتی ہے ‘‘۔اس سے اس بات کا پتہ چلتا ہے کہ رکوع میں خوب اللہ کی تعظیم اور تسبیح و تقدیس بیان کرنامشروع کیا اور دعا کے لئے رکوع کی بنسبت سجدوں کوخاص کیا ، اب اس کا یہ مطلب ہرگز نہیں ہے کہ رکوع میں دعابالکل نہیں کی جاسکتی بلکہ اس کا مطلب یہ ہے کہ سجدوں میں باقی پوری نماز کی بنسبت زیادہ دعا قبو ل ہوتی ہے ۔صحیحین میں حضرت عائشہ ؓ سے رکوع میں تسبیح کے بعد دعا کا ذکر منقول ہے وہ فرماتی ہیں کہ:’’آپرکوع و سجود میں بکثرت یہ فرمایا کرتے (سبحانک اللھم ربناوبحمدک اللھم اغفرلی)لہٰذا نمازی کو چاہئے کہ رکوع میں تو خوب اللہ کی تعظیم بیان کرے اور سجدے میں خوب دعا مانگے ‘‘۔واللہ أعلم۔

آپ کا بھائی

خالد المصلح

20/10/1424هـ

التعليقات (0)

×

هل ترغب فعلا بحذف المواد التي تمت زيارتها ؟؟

نعم؛ حذف