الاثنين 25 ربيع آخر 1443 هـ
آخر تحديث منذ 31 دقيقة
×
تغيير اللغة
القائمة
العربية english francais русский Deutsch فارسى اندونيسي اردو Hausa
الاثنين 25 ربيع آخر 1443 هـ آخر تحديث منذ 31 دقيقة

نموذج طلب الفتوى

لم تنقل الارقام بشكل صحيح
×

لقد تم إرسال السؤال بنجاح. يمكنك مراجعة البريد الوارد خلال 24 ساعة او البريد المزعج؛ رقم الفتوى

×

عفواً يمكنك فقط إرسال طلب فتوى واحد في اليوم.

فرض نمازفوت ہوگئی اوردوسری نماز کا وقت ہوگیا تو کس نماز کو پہلے پڑھے گا؟

مشاركة هذه الفقرة

فرض نمازفوت ہوگئی اوردوسری نماز کا وقت ہوگیا تو کس نماز کو پہلے پڑھے گا؟

تاريخ النشر : 11 ربيع آخر 1438 هـ - الموافق 10 يناير 2017 م | المشاهدات : 722

اگر کسی سے نمازِ ظہر فوت ہوجائے اور پھر نمازِ عصر کا وقت داخل ہوجائے تو پہلے کون سی نماز پڑھے گا؟ اور کیا وہ نمازِ ظہر کے لئے سننِ مؤکدہ پڑھے گا؟

فاته فرض ثم دخل وقت الذي يليه فبأيهما يبدأ

اما بعد۔۔۔

اللہ کی توفیق سے ہم آپ کے سوال کا جواب یہ دیتے ہیں:

آپ پہلے ظہر کی نماز پڑھیں پھر عصر کی نماز پڑھیں اس لئے کہ اللہ جل شانہ کا ارشاد گرامی ہے :(ترجمہ) ’’نماز ایمان والوں پر وقتِ مقررہ پر فرض کردی گئی ہے‘‘  اور یہ بات تو معلوم ہے کہ ظہر کا وقت عصر سے پہلے ہے لہٰذا نمازوں کی ترتیب کے مطابق اسی کی محافظت ضروری ہے یہی تابعین ، تبع تابعین ، حنفیہ ، مالکیہ ، حنابلہ اور جمہور علماء کا مذہب ہے لیکن یہ صورت تب ہے جب موجودہ نماز کے فوت ہونے کا اندیشہ نہ ہو اگر ایسی صورتِ حال ہو تو پھردوسری نماز کے وقت کی رعایت میں یہ ترتیب ساقط ہوجاتی ہے ۔ باقی رہی سنن مؤکدہ کی بات تو اس کی قضاء نماز کے ساتھ کی جائے اور یہ تب ہے جب اس نے کسی عذر کی بناء پر نماز میں تاخیر کی ہوجیسا کہ آپکا ارشاد پاک ہے : ’’ اگر کوئی شخص نماز بھو ل جائے یا نماز کے وقت سوجائے تو جب اسے یاد آئے اس وقت پڑھ لے اس نماز کا اس کے سوا کوئی اور کفا رہ نہیں ہے ، اس کے بعد آپنے اللہ کا تعالیٰ کا یہ ارشاد بیان فرمایا:(ترجمہ) ’’ اور میری یاد کے لئے نماز قائم کر‘‘۔ یہ حدیث صحیحین میں حضرت انس بن مالکؓ سے مروی ہے ۔

آپ کا بھائی

أ.د خالد المصلح

26/10/1424هـ

التعليقات (0)

×

هل ترغب فعلا بحذف المواد التي تمت زيارتها ؟؟

نعم؛ حذف