الاثنين 21 صفر 1443 هـ
آخر تحديث منذ 5 ساعة
×
تغيير اللغة
القائمة
العربية english francais русский Deutsch فارسى اندونيسي اردو Hausa
الاثنين 21 صفر 1443 هـ آخر تحديث منذ 5 ساعة

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته.

الأعضاء الكرام ! اكتمل اليوم نصاب استقبال الفتاوى.

وغدا إن شاء الله تعالى في تمام السادسة صباحا يتم استقبال الفتاوى الجديدة.

ويمكنكم البحث في قسم الفتوى عما تريد الجواب عنه أو الاتصال المباشر

على الشيخ أ.د خالد المصلح على هذا الرقم 00966505147004

من الساعة العاشرة صباحا إلى الواحدة ظهرا 

بارك الله فيكم

إدارة موقع أ.د خالد المصلح

×

لقد تم إرسال السؤال بنجاح. يمكنك مراجعة البريد الوارد خلال 24 ساعة او البريد المزعج؛ رقم الفتوى

×

عفواً يمكنك فقط إرسال طلب فتوى واحد في اليوم.

حدیث:جس نے ہرارت سورۃ تبارک الذی پڑھی اسے عذابِ قبر سے بچایا جائے گا

مشاركة هذه الفقرة

حدیث:جس نے ہرارت سورۃ تبارک الذی پڑھی اسے عذابِ قبر سے بچایا جائے گا

تاريخ النشر : 25 ربيع آخر 1438 هـ - الموافق 24 يناير 2017 م | المشاهدات : 1492
- Aa +

حدیث: جس نے ہرارت سورۃ تبارک الذی پڑھی اسے عذابِ قبر سے بچایا جائے گا۔ اس حدیث کی صحت کیا ہے؟

حديث من قرأ سورة تبارك في كل ليلة عصم من عذاب القبر

حامداََ و مصلیاََ۔۔۔

اما بعد۔۔۔

سورۃ  تبارک الذی کی فضیلت میں بہت ساری روایات وارد ہوئی ہیں جن میں سے ایک حدیث امام رترمذیؒ نے اپنی جامع کتاب میں (۲۸۹۰) حضرت ابن عباسؓ سے روایت کی ہے کہ آپنے ارشاد فرمایا کہ:  ’’ سورۃ  تبارک الذی مانعہ ہے یعنی عذابِ قبر سے منع کرتی ہے اور یہ منجیہ بھی ہے کہ عذابِ قبر سے نجات دلاتی ہے‘‘۔  ابو عیسی فرماتے ہیں کہ یہ حدیث اس طریق سے حدیثِ حسن غریب ہے۔ اور امام بیہقی فرماتے ہیں کہ ابنِ مسعودؓ نے سورۃ ملک کے بارے میں فرمایا کہ ہم عہد نبوت میں اس سورت کو مانعہ کہتے تھے۔  اور امام احمدؒ نے (۷۹۱۵) میں امام ابو داؤد نے (۱۴۰۰) میں اور امام ترمذیؒ نے(۲۸۹۱) میں حضرت ابو ہریرہؓ سے روایت کی ہے کہ آپنے ارشاد فرمایا:  ’’ قرآن میں ایک ایسی سورت ہے جس میں تیس آیات ہیں وہ ایک آدمی کی شفاعت کرتی رہی یہاں تک کہ اسے بخش دیا گیا اور وہ سورت تبارک الذی بیدہ الملک ہے‘‘۔ اس حدیث میں کسی طرف سے ضعف نہیں پایا جاتا اور ممکن ہے کہ ان ساری احادیث سے اس سورت کی فضیلت ثابت ہوئی ہو۔

التعليقات (0)

×

هل ترغب فعلا بحذف المواد التي تمت زيارتها ؟؟

نعم؛ حذف