الجمعة 29 ربيع آخر 1443 هـ
آخر تحديث منذ 2 ساعة 48 دقيقة
×
تغيير اللغة
القائمة
العربية english francais русский Deutsch فارسى اندونيسي اردو Hausa
الجمعة 29 ربيع آخر 1443 هـ آخر تحديث منذ 2 ساعة 48 دقيقة

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته.

الأعضاء الكرام ! اكتمل اليوم نصاب استقبال الفتاوى.

وغدا إن شاء الله تعالى في تمام السادسة صباحا يتم استقبال الفتاوى الجديدة.

ويمكنكم البحث في قسم الفتوى عما تريد الجواب عنه أو الاتصال المباشر

على الشيخ أ.د خالد المصلح على هذا الرقم 00966505147004

من الساعة العاشرة صباحا إلى الواحدة ظهرا 

بارك الله فيكم

إدارة موقع أ.د خالد المصلح

×

لقد تم إرسال السؤال بنجاح. يمكنك مراجعة البريد الوارد خلال 24 ساعة او البريد المزعج؛ رقم الفتوى

×

عفواً يمكنك فقط إرسال طلب فتوى واحد في اليوم.

کیا بجلی کے کرنٹ سے مرنے والا شہید ہے؟

مشاركة هذه الفقرة

کیا بجلی کے کرنٹ سے مرنے والا شہید ہے؟

تاريخ النشر : 22 جمادى آخر 1438 هـ - الموافق 21 مارس 2017 م | المشاهدات : 1638

کیا بجلی کے کرنٹ سے مرنے والے کا حکم بھی آگ سے جلنے والے کی طرح ہے کہ اس کو شہید شمار کیا جائے؟

هل المصعَق كهربائيًّا شهيد؟

حامداََ و مصلیاََ۔۔۔

اما بعد۔۔۔

اللہ کیتوفیق سے ہم آپ کے سوال کے جواب میں کہتے ہیں کہ

میری رائے اس معاملہ میں یہ ہے کہ جلنے اور کرنٹ لگنے میں کچھ فرق ہے، اگرچے دونوں پر اثر ایک سا ہی ہوتا ہے، اور اس فرق کی وجہ سے میں حتماََ کرنٹ لگنے والے کو جلنے والے کے حکم میں علی الاطلاق شمار نہیں کر سکتا، مگر اس صورت میں کہ کرنٹ لگنے سے بھی آگ لگ گئی ہو یعنی کرنٹ کا جھٹکا بہت ہی شدید ہو۔ جہاں تک عام کرنٹ لگنے کی بات ہے جس سے بدن نہیں جلتا تو اس پر آگ والا حکم صادق نہیں آتا۔

آپ کا بھائی

خالد المصلح

26/10/1424هـ

التعليقات (0)

×

هل ترغب فعلا بحذف المواد التي تمت زيارتها ؟؟

نعم؛ حذف