السبت 12 صفر 1443 هـ
آخر تحديث منذ 3 ساعة 22 دقيقة
×
تغيير اللغة
القائمة
العربية english francais русский Deutsch فارسى اندونيسي اردو Hausa
السبت 12 صفر 1443 هـ آخر تحديث منذ 3 ساعة 22 دقيقة

نموذج طلب الفتوى

لم تنقل الارقام بشكل صحيح
×

لقد تم إرسال السؤال بنجاح. يمكنك مراجعة البريد الوارد خلال 24 ساعة او البريد المزعج؛ رقم الفتوى

×

عفواً يمكنك فقط إرسال طلب فتوى واحد في اليوم.

ایک ملک میں روزے شروع کئے پھر وہاں سے سفر کیا،جہاں لوگ ایک دن پہلے روزہ شروع کر چکے تھے

مشاركة هذه الفقرة

ایک ملک میں روزے شروع کئے پھر وہاں سے سفر کیا،جہاں لوگ ایک دن پہلے روزہ شروع کر چکے تھے

تاريخ النشر : 11 رجب 1438 هـ - الموافق 08 ابريل 2017 م | المشاهدات : 846

ایسے شخص کا کیا حکم ہے جس نے ایک ملک میں روزے شروع کئے ہو پھر سفر کیا اور کسی دوسرے ملک چلا گیا جہاں لوگ ایک دن پہلے روزہ شروع کر چکے تھے؟

ما حكم من بدأ الصوم في بلد ثم سافر إلى بلد قد سبقوهم بصيام يوم؟

حمد و ثناء کے بعد۔۔۔

بتوفیقِ الہٰی آپ کے سوال کا جواب درج ذیل ہے:

جب ایسا شخص ۲۹یا ۳۰روزے پورے کر چکا تو اس نے فرض ادا کر دیا، مثال کے طور پے: اگر آپ نے آج سعودیہ میں روزہ رکھا اور جس ملک میں آپ جارہے ہیں وہاں سعودیہ سے ایک دن پہلے رمضان کا اعلان ہو گیا تھا تو اس صورتحال میں آپ لوگوں کے ساتھ روزہ رکھیں جب تک وہ روزے پورے نہ کر لیں؛ کیونکہ روزہ تب رکھنا ہوتا ہے جب لوگ روزہ رکھیں۔

کہنے والا کہہ سکتا ہے کہ وہ زیادہ روزے رکھیں گے، مطلب یہ کہ سعودیہ نے تو ۳۰روزے پورے کر لئے لیکن پھر بھی ایک روزہ بچتا ہے جس سے آپ کیلئے ۳۱روزے ہو جائیں گے، تو علماء میں سے بعض کہتے ہیں کہ وہ ۳۰روزوں پر ہی اکتفاء کرے اور ایک زائد روزہ رکھنے کی ضرورت نہیں کیونکہ مہینہ پورا ہو چکا ، مہینہ تو ۳۰کا ہوتا ہے یا ۲۹کا جیسا کہ رسول اللہ ؐ نے انگلیوں کے اشارے سے سمجھایا۔

بعض علماء کا کہنا ہے کہ وہاں آپ روزہ رکھیں گے اگرچے ۳۰سے زائد ہی کیوں نہ ہو جائیں اور یہی مجھے زیادہ اقرب معلوم ہوتا ہے، واللہ اعلم۔ اسی لئے کہ نبیؐ نے فرمایا: ((روزہ اس دن ہے جب لوگ روزہ رکھیں اور فطر اس دن ہے جس دن لوگ روزہ نہ رکھیں)) اور یہاں لوگوں سے مراد آس پاس والے لوگ ہیں کیونکہ ہر ملک کا روزہ اس کے کساتھ مخصوص ہوتا ہے (یعنی کیلنڈر کے اعتبار سے) اور دیگر ممالک سے مختلف ہوتا ہے۔

میری رائے تو یہی ہے کی اگر آپ کسی دوسرے ملک سفر بھی کریں تو آپ کو چاہئیے کہ امساک ہی کریں، یعنی روزے رکھتے رہیں جب تک ان کے روزے پورے نہ ہو جائیں۔

اور اس کے برعکس : مثال کے طور پر کسی نے مغرب میں روزے رکھنے شروع کئے اور وہاں کے لوگوں نے سعودی عرب سے ایک دن بعد روزہ رکھا ہوپھر وہ شخص سعودی عرب آجائے اور سارا مہینہ وہی گزارے، تو اگر یہاں عید کا اعلان ہوتا ہے اور اس کے ۲۹روزے پورے ہوتے ہیں تو اس حالت میں اس کے روزے پورے ہیں اور اس کے لئے ضروری نہیں کہ وہ ایک دن کی قضاء کرے جو اس نے مغرب میں رکھنا تھا۔

اور اگر مہینہ کے اختتام سے پہلے اعلان ہو جائے یعنی ۲۹کی مغرب کو چاند نظر آئے ، اور عید کا اعلان ہوجائے تو اس حالت میں اس کے ۲۸روزے ہوئے لیکن وہ لوگوں کے ساتھ ہی عید کرے گاکیونکہ نبیکا فرمان ہے: ((روزہ تب ہے جس دن لوگوں کا روزہ ہو اور عید تب ہے جب لوگوں کی عید ہو))۔ لہذا جس ملک میں وہ ابھی رہ رہا ہے وہاں وہ عید کرے گا اور بعد میں ایک روزہ قضاء کا رکھے گا

التعليقات (0)

×

هل ترغب فعلا بحذف المواد التي تمت زيارتها ؟؟

نعم؛ حذف