الاحد 20 صفر 1443 هـ
آخر تحديث منذ 2 ساعة 1 دقيقة
×
تغيير اللغة
القائمة
العربية english francais русский Deutsch فارسى اندونيسي اردو Hausa
الاحد 20 صفر 1443 هـ آخر تحديث منذ 2 ساعة 1 دقيقة

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته.

الأعضاء الكرام ! اكتمل اليوم نصاب استقبال الفتاوى.

وغدا إن شاء الله تعالى في تمام السادسة صباحا يتم استقبال الفتاوى الجديدة.

ويمكنكم البحث في قسم الفتوى عما تريد الجواب عنه أو الاتصال المباشر

على الشيخ أ.د خالد المصلح على هذا الرقم 00966505147004

من الساعة العاشرة صباحا إلى الواحدة ظهرا 

بارك الله فيكم

إدارة موقع أ.د خالد المصلح

×

لقد تم إرسال السؤال بنجاح. يمكنك مراجعة البريد الوارد خلال 24 ساعة او البريد المزعج؛ رقم الفتوى

×

عفواً يمكنك فقط إرسال طلب فتوى واحد في اليوم.

میں نے راستے میں کار سے ایک بکری کے بچے کو مارا اس سے مجھ پر کیا کفارہ لازم آئے گا؟

مشاركة هذه الفقرة

میں نے راستے میں کار سے ایک بکری کے بچے کو مارا اس سے مجھ پر کیا کفارہ لازم آئے گا؟

تاريخ النشر : 23 شعبان 1438 هـ - الموافق 20 مايو 2017 م | المشاهدات : 691

ایک ہائی-وے پر کار چلاتے ہوئے اچانک میرے سامنے ایک بکریوں کا ریوڑ آیا جس میں ایک بکری کا بچہ میری کار سے ٹکرایا اب یہ مجھے نہیں پتہ کہ وہ مر گیا یا اس کی ہڈی پسلی ٹوٹی ، اور میں کار تیز کرکے وہاں سے رفوچکر ہوگیا اور ایک لمحہ کے لئے بھی نہیں رکا، لہٰذا اب مجھ پر کیا کفارہ آئے گا؟

صدمت ماعزا في الخط السريع، فماذا عليّ؟

حمد و ثناء کے بعد۔۔۔

بتوفیقِ الٰہی آپ کے سوال جواب پیشِ خدمت ہے:

اگر اس ہائی-وے کے دائیں بائیں کنڈک تار یا باڑ لگی ہو جو چرواہوں کو اس روڈ کے پاس قریب جانے سے منع کرتی ہو تو پھر آپ پر کوئی کفارہ واجب نہیں ہے

التعليقات (0)

×

هل ترغب فعلا بحذف المواد التي تمت زيارتها ؟؟

نعم؛ حذف