فتوا فارم کے لئے درخواست

غلط کیپچا
×

بھیجا اور جواب دیا جائے گا

×

افسوس، آپ فی دن ایک فتوی بھی نہیں بھیج سکتے.

حج و عمرہ / حج کے دوران مشت زنی کا حکم

حج کے دوران مشت زنی کا حکم

تاریخ شائع کریں : 2016-08-22 | مناظر : 1687
- Aa +

جناب من السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ ! میرا سوال یہ ہے کہ اگر محرم شخص دورانِ حج وقوفِ عرفہ سے پہلے مشت زنی کا ارتکاب کرلے تو اس پر کیا واجب ہوتا ہے؟ ترجمۃ

الاستمناء للمحرم.

وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ وبرکاتہ!

اما بعد۔۔۔

دورانِ حج جو بھی اس فعل کا ارتکاب کرتا ہے تو اس پر فدیہ واجب ہوتا ہے اس لئے کہ اس نے احرام کے منع کردہ افعال میں سے ایک ممنوع فعل کا ارتکاب کیا ہے ، جیسا کہ ارشاد باری تعالی ہے: (ترجمہ) ’’ تو روزوں یا صدقے یا قربانی کا فدیہ دے‘‘۔

پس اس کو یہ اختیار دیا جائے گا کہ یا تو وہ حرم میں بکری ذبح کرکے حرم کے فقراء پرصدقہ کردے ، یا حرم کے ساٹھ مسکینوں کو کھانا کھلائے یا پھر وہ تین روزے رکھے‘‘۔

أ.د.خالد المصلح

29/ 11 /1428هـ

×

کیا آپ واقعی ان اشیاء کو حذف کرنا چاہتے ہیں جو آپ نے ملاحظہ کیا ہے؟

ہاں، حذف کریں