فتوا فارم کے لئے درخواست

غلط کیپچا
×

بھیجا اور جواب دیا جائے گا

×

افسوس، آپ فی دن ایک فتوی بھی نہیں بھیج سکتے.

نکاح / عقدِ نکاح سے پہلے زوجین کا ایک دوسرے کا چال چلن پوچھنا

عقدِ نکاح سے پہلے زوجین کا ایک دوسرے کا چال چلن پوچھنا

تاریخ شائع کریں : 2016-09-05 | مناظر : 1384
- Aa +

جناب من ڈاکٹر صاحب اگر کوئی شخص کسی عورت کے نام نکاح کا پیغام بھیجے تو عورت کے لئے موبائل فون پر اس شخص کے چال چلن کے متعلق پوچھنا جائز ہے؟

ضا بط ما یسأل عنہ من حال الخاظب

جی ہاں (عقدِ نکاح سے پہلے)دین و اخلاق کی ثبوت کے لئے زوجین میں سے ہر ایک کو ایک دوسرے کی بابت پوچھنا جائز ہے جیسا کہ حدیثِ ابی ھریرہ رضی اللہ عنہ میں ہے کہ آنجناب نے فرمایا کہ’’ جب کوئی ایسا شخص تمہارے پاس اپنا رشتہ بھیجے جس کے دین و اخلاق سے تم راضی ہو تو اس کا نکاح کرادواگر تم ایسا نہیں کروگے تو زمین میں بہت بڑا فتنہ و فساد برپا ہوجائے گا ‘‘  أخرجہ الترمذی (۱۰۸۴)  (اور آپ جانتے ہیں) کہ کسی کے دین و اخلاق اور امانت سے رضامندی اس کے دیکھنے کے بعد ہی ہوتی ہے، پس ہر وہ ذریعہ جس سے کسی زیادتی کے بغیر حال کا علم حاصل ہو تو وہ جائز ہے،لیکن یہ بات ذہن نشین رہے کہ اس سے کسی کی ہتکِ عزت اور آبروریزی مقصود نہ ہو، جیسا کہ زوجین میں سے کوئی دوسرے کے متعلق یہ پوچھے کہ تم کبھی کسی گناہ کے مرتکب ہوئے ہو،؟ یا تم نے فلاں فلاں گناہ کا ارتکاب کیا ہے؟  لہٰذا نہ تو سائل کے لئے اس قسم کے سوال کرناجائز ہے اور نہ ہی مسٔول عنہ کے لئے اس کے متعلق آگاہ کرنا جائز ہے،  اور اسی طرح جس سے ہتکِ حرمات حاصل ہو اس کے متعلق پوچھنا بھی جائز نہیں ہے، جیسا کہ تصویر کے بارے میں پوچھا جائے،لہٰذا لوگوں کے سامنے زوجین میں سے کسی ایک کو دوسرے سے اس کی خصوصیات کے متعلق پوچھ گچھ درست نہیں ، واللہ أعلم۔

 

آپکا بھائی

أ۔د؍خالد المصلح

۱۴؍۱۰؍۱۴۲۸ھ

×

کیا آپ واقعی ان اشیاء کو حذف کرنا چاہتے ہیں جو آپ نے ملاحظہ کیا ہے؟

ہاں، حذف کریں