فتوا فارم کے لئے درخواست

غلط کیپچا
×

بھیجا اور جواب دیا جائے گا

×

افسوس، آپ فی دن ایک فتوی بھی نہیں بھیج سکتے.

نکاح / چھوٹی بچی کے ساتھ نکاح

چھوٹی بچی کے ساتھ نکاح

تاریخ شائع کریں : 2016-09-06 | مناظر : 1521
- Aa +

میں نے ایک مجلس میں چھوٹی بچی سے لطف اندوزی کے جواز میں خومینی کا فتوی پیش کیا پھر مجھے ایک رافضی ملا جس نے مجھ پر رد کرتے ہوئے کہا کہ ہمارے نزدیک بعض فقہی کتابوں میں چھوٹی بچی سے لطف اندوزی کے جواز میں بعض علماء کا قول بیان کرو۔ لھذا ہمارے نزدیک چھوٹی بچی سے تمتع کے جواز کا مقصود و معرفت اور اس کے رد کا جواب ابھی تک میں نہیں دے سکی اور اس رافضی نے مجھے دو کتابوں کے نام بھی بتائے جس میں مجھے ایک کتاب کے مصنف کا نام یاد ہے جو کہ مقدسی کی تھی اور مجھے اس کے کلمات تو ملے ہیں جیسا اس نے لکھا تھا لیکن مجھے اسکا جواب ، شرح ، یا تفسیر نہیں ملی۔

نكاح الرضيعة

بعد الحمد والصّلوۃ

سب سے پہلے میں آپکو جس چیز کی نصیحت کرتا ہوں وہ کہ ہر وہ کام جس میں بحث و مباحثہ ہو اس میں دخل نہ دو اس لئے کہ ہمارے اسلاف اپنے علم کامل اور قوت یقین کے باوجود بھی اہل باطل کے ساتھ بحث و مباحثہ اور مناظروں سے بچا کرتے تھے اور انہوں نے بھی اس سے بہت زیادہ

منع فرمایا ہے لہذا میں  آپکو انکے نقش قدم پر چلنے کی نصیحت کرتا ہوں اور ان میں اگر کوئی اس بحث و مباحثے میں پڑا بھی ہے تو وہ تب جب اس کو اسکی مصلحت و منفعت نظر آئی ہو۔ اور بعض نے تو اسکو ضرورت کے تحت کیا ہے جیسا کہ امام احمد بن حنبل رح فرماتے ہیں کہ "ہم سکوت و خاموشی کا حکم دیتے تھے لیکن جب ھمیں کسی ایسے کام کے لئے بلایا جاتا جسکے بغیر ہمیں کوی چارہ کار نہ ہوتا تھا تو پھر ہم اسکو دفع کرتے تھے اور مخاطب نے جو کہا ہوتا تھا اس کی نفی میں ہم بات کرتے تھے" اور یہ بھی فرمایا کہ "ہم خاموش رہتے تھے یہاں تک کہ ہمیں کلام کی طرف بلایا جاتا تو اگر اس کے بغیر کوئی چارہ نہ ہوتا تو ہم کلام کرتے" لھذا انسان کے پاس ایسا علم راسخ ہونا چاہئے جس کے ذریعے سے وہ مشبہھین کے تشبیہ سے بچاؤ کر سکے اور انکی ضلالات کا جواب دے سکے۔

رہی بات چھوٹی بچی سے نکاح کی تو اس کے بارے میں ابن المنذر فرماتے ہیں کہ " اہل علم سے ہم نے جو محفوظ کیا ہے اس میں جامع بات یہ ہے کہ باپ کا اپنی چھوٹی بیٹی کا نکاح کرنا جائز ہے (اگر باپ اس کو اسکے کف سے بیاہ دے) اور مراد اس سے عقد نکاح ہے رہی بات استمتاع کی تو جب تک سنِ بلوغ تک نہیں پہنچتی تو اس سے استمتاع ممکن نہیں ہے اور علماء کی ایک جماعت نے اس کی حد نو سال بتائی ہے اور حد مقرر کرنا غالب حکم پر ہے اگر وہ اس عمر میں بھی اسکی طاقت نہ رکھتی ہو تو اس کے ساتھ وطی کرنا ناجائز ہے اس لئے کہ اس میں اسکا ضرر اور نقصان ہے اور رہی بات چھوٹی بچی سے تمتع حاصل کرنے کی (جیسا کہ آپ نے ذکر کیا) تو اس سے مراد صرف وطی اور اس کے مقدمات ہیں اسلئے کہ متعہ ایک ایسا عقد ہے جس سے استمتاع مقصود ہوتا ہے کیونکہ عاقد اپنا مال متعہ ہی کے لئے خرچ کرتا ہے نہ کہ اسکے لئے جو عقد نکاح کے حقوق و ارتباط سے ثابت ہوتا ہے لھذا علمائے اہل سنت اور خمینی نے جو فرمایا ہے اس میں فرق کریں۔ واللہ اعلم

خالد المصلح

10/04/1425هـ

×

کیا آپ واقعی ان اشیاء کو حذف کرنا چاہتے ہیں جو آپ نے ملاحظہ کیا ہے؟

ہاں، حذف کریں