فتوا فارم کے لئے درخواست

غلط کیپچا
×

بھیجا اور جواب دیا جائے گا

×

افسوس، آپ فی دن ایک فتوی بھی نہیں بھیج سکتے.

نماز / اگر کوئی بھول کر قعدۂ أولیٰ سے اٹھ کھڑا ہوجائے اور پھربیٹھ جائے تو اس کا کیا حکم ہے؟

اگر کوئی بھول کر قعدۂ أولیٰ سے اٹھ کھڑا ہوجائے اور پھربیٹھ جائے تو اس کا کیا حکم ہے؟

تاریخ شائع کریں : 2017-01-08 | مناظر : 1340
- Aa +

اگر نماز ی نماز میں قعدۂ أولیٰ بھول جائے اور بالکل سیدھا کھڑاہوجائے اور لوگ اس کو سبحان اللہ کہہ کر لقمہ دے پھر وہ دوبارہ تشہد کے لئے بیٹھ جائے تو کیا اس کی نماز باطل ہوگی یا نہیں؟ اللہ آپ کو جزائے خیر دے

قام ناسياً التشهد الأوسط ثم رجع وجلس فما حكمه؟

اما بعد۔۔۔

اللہ کی توفیق سے ہم آپ کے سوال کا جواب یہ دیتے ہیں:

اس مسئلے میں علماء کے دو اقوال ہیں:

پہلاقول:   اگر وہ (اٹھ کر)دوبارہ بیٹھ جائے تو اس کی نماز باطل ہوگئی یہ ایک روایت کے مطابق امام شافعی ؒ اور امام احمدؒ کا مذہب ہے ۔

دوسرا قول:   اگر وہ قرأت سے پہلے بیٹھ جائے تو اس کی نماز باطل نہیں ہوئی اور یہی امام احمدؒ کی مشہور روایت ہے ۔

اور ان دونوں میں پہلا قول ہی صحیح ہے لیکن یہ تب ہے جب اس کو اس بات کا علم ہو اور اگر ایسا بھول کر یا نادانستگی سے ہو تو پھر اس کی نماز صحیح ہے ۔واللہ أعلم۔

آپ کا بھائی

خالد المصلح

18/12/1424هـ

×

کیا آپ واقعی ان اشیاء کو حذف کرنا چاہتے ہیں جو آپ نے ملاحظہ کیا ہے؟

ہاں، حذف کریں