فتوا فارم کے لئے درخواست

غلط کیپچا
×

بھیجا اور جواب دیا جائے گا

×

افسوس، آپ فی دن ایک فتوی بھی نہیں بھیج سکتے.

روزه اور رمضان / حمل کا برقراررہنا اور روزوں کی قضاء کی طاقت نہ ہو؟

حمل کا برقراررہنا اور روزوں کی قضاء کی طاقت نہ ہو؟

تاریخ شائع کریں : 2017-02-28 | مناظر : 1619
- Aa +

جس عورت کا حمل پے در پے ہو اور اس کو قضاء کی طاقت نہ ہو اس کے لئے کیا حکم ہے؟

تتابع حملها ولم تستطع القضاء

حامداََ و مصلیاََ۔۔۔

اما بعد۔۔۔

اللہ تعالی کی توفیق سے جواب دیتے ہوے ہم عرض کرتے ہے کہ

اس میں آپ پر کوئی حرج نہیں ہے اورجب آپ کو استطاعت ہوتو جودن آپ کے ذمے لازم ہوچکے ہیں ان کا روزہ رکھ لیں ۔ اللہ تعالیٰ فرماتے ہیں: (جوتم میں سےمریض ہویاسفر میں ہو تو اس پر گنتی کے روزے ہے دوسرے دنوں کی) (البقرۃ:۱۸۵) یہ فرض روزوں کا حکم ہے پس قضاء روزوں کا بھی یہی معاملہ ہوگا توجب تک اسے روزہ رکھنے کی طاقت نہ ہو تواس کے لئے روزہ رکھنا اس وقت ہوگا جب اسے قدرت حاصل ہوجائے۔ اورممکن ہے کہ حمل کی  مدت اتنی لمبی ہوجائے کہ رمضان کا مہینہ بھی داخل ہوجائے تو اس کو آنے والے رمضان سے پہلے روزہ رکھنے کی قدرت حاصل نہیں ہوگی تو اس میں کوئی حرج نہیں کہ اس رمضان کے گزرنے کے بعد روزہ رکھ لے۔ اور اس کے ذمہ صرف روزہ ہی ہے کھانا کھلانا نہیں۔ اور جن لوگوں نے یہ کہا ہےکہ جب رمضان سے روزہ موخر کرے تواس کے ذمہ اب کھانا کھلانا ہے ،توان کے اس قول کا مطلب بھی یہ ہے کہ جب اس طرح تاخیر کرنا اس نے بغیر عذر کے کیا ہو۔اور اس عورت نے توعذر کی بنا پر تاخیر کی ہے۔

اور جورمضان کے بعد شوال ،ذی قعدہ، اورذی الحجہ وغیرہ کےمہینوں کا وقت گزرا تو اس کا بھی کوئی کفارہ نہیں کیونکہ اس فریضے میں بڑی وسعت ہے نہ توقضاء رکھنے کے حوالے سے کوئی تنگی ہے اور نہ اس سے یہ مطالبہ کیا گیا ہے کہ قضاء اول  وقت ہی میں کرے لہذا جب اسے عذر پیش آیا اور یہ عذر رمضان تک  جاری رہا تویہ معذورہ ہے۔

×

کیا آپ واقعی ان اشیاء کو حذف کرنا چاہتے ہیں جو آپ نے ملاحظہ کیا ہے؟

ہاں، حذف کریں