×
العربية english francais русский Deutsch فارسى اندونيسي اردو

خدا کی سلام، رحمت اور برکتیں.

پیارے اراکین! آج فتوے حاصل کرنے کے قورم مکمل ہو چکا ہے.

کل، خدا تعجب، 6 بجے، نئے فتوے موصول ہوں گے.

آپ فاٹاوا سیکشن تلاش کرسکتے ہیں جو آپ جواب دینا چاہتے ہیں یا براہ راست رابطہ کریں

شیخ ڈاکٹر خالد الاسلام پر اس نمبر پر 00966505147004

10 بجے سے 1 بجے

خدا آپ کو برکت دیتا ہے

فتاوی جات / روزه اور رمضان / صرف جمعہ کے دن کا روزہ رکھنا

اس پیراگراف کا اشتراک کریں WhatsApp Messenger LinkedIn Facebook Twitter Pinterest AddThis

تاریخ شائع کریں:2017-03-19 12:58 PM | مناظر:3834
- Aa +

صرف جمعہ کے دن روزہ رکھنے کا کیا حکم ہے؟

صيام الجمعة منفرداً

جواب

حامداََ و مصلیاََ۔۔۔

اما بعد۔۔۔

اللہ کی توفیق سے ہم آپ کے سوال کے جواب میں کہتے ہیں کہ

نبینے صرف جمعہ کے دن کو خاص کرکے روزہ رکھنے سے منع فرمایا۔ جیسا کہ صحیح میں حضرت ابوہریرۃؓ کی حدیث میں ہے: (جمعہ کا دن خاص نہ کرو روزے کے لئے اور نہ اس کی رات قیام کے لئے) نبینے اس دن کو خاص کرنے سے منع فرمایا اور ایک بار نبیاپنی ایک زوجہ محترمہ کے پاس جمعہ والے دن تشریف لائے اور ان کو روزہ کی حالت میں پایا تو فرمایا: (کیا آپ نے کل روزہ رکھا تھا؟ انہوں نے کہا نہیں۔ آپ نے ہوچھا کیا آپ آئندہ کل روزہ رکھو گی؟ انہوں نے جواب دیا نہیں۔ تو آپنے فرمایا: پھر آپ اس روزے کو افطار کریں۔) لہذا نبینے صرف جمعہ کے دن کے روزے سےمنع فرمایا۔ لیکن علماء فرماتے ہیں کہ یہ روکنا اس وقت ہے کہ جب یہ اکیلا روزہ خاص کرنے کی وجہ سے ہو یعنی روزہ رکھنا جمعہ کا دن ہونے کی وجہ سے ہو اورجہاں تک یہ بات ہے کہ اس وجہ سے روزہ رکھا جائےکہ آج کے دن وہ عمل سے فارغ ہے یا یہ ایسا  دن ہو کہ اس میں اس کے لئے روزہ رکھنے میں آسانی ہو اور ایسی کوئی نیت نہ ہو جس کا تعلق اس دن کی تخصیص ہو تواس حالت میں روزہ رکھنا صحیح ہے اور یہ اس نہی کے حکم میں داخل نہیں ہوگا


آپ چاہیں گے

ملاحظہ شدہ موضوعات

1.

×

کیا آپ واقعی ان اشیاء کو حذف کرنا چاہتے ہیں جو آپ نے ملاحظہ کیا ہے؟

ہاں، حذف کریں