فتوا فارم کے لئے درخواست

غلط کیپچا
×

بھیجا اور جواب دیا جائے گا

×

افسوس، آپ فی دن ایک فتوی بھی نہیں بھیج سکتے.

طلاق / بغیر ہوش و حواس اور شعور کے لفظ طلاق بولا، اس کا کیا حکم ہے؟

بغیر ہوش و حواس اور شعور کے لفظ طلاق بولا، اس کا کیا حکم ہے؟

تاریخ شائع کریں : 2017-05-01 | مناظر : 1197
- Aa +

اگر ایک آدمی کو ذہن میں عجیب و غریب وہم اور خیالات آتے رہتے ہیں، اور یہ بات تو معلوم ہے کہ انسان کبھی کبھار جو ذہن میں آئے بغیر سمجھے ہی کہہ دیتا ہے، تو کیا اگر ایسی ہی صورت ہو اور آدمی طلاق کے بارے میں محض خیالات کا سامنا کر رہا ہو اور بغیر حواس کے لفظ طلاق بول بیٹھے تو کیا طلاق واقع ہو جائیگی؟

نطق بلفظة الطلاق دون وعي أو شعور، فما الحكم؟

حمد و ثناء کے بعد۔۔۔

طلاق اسے شخص کی واقع ہوتی ہے جو لفظ طلاق اس حالت میں بولے کہ وہ عقل و شعور رکھتا ہو اپنے الفاظ پر اسے اختیار ہو اور زبردستی نہ ہو، تو جو آپ بتا رہے ہیں وہ اگر ایسے ہی مذکورہ صورتحال میں ہے تو وہ طلاق ہی ہے جب تک یہ نہ ہو کہ مبتلی بہ کو وساوس کی بیماری ہے، کیونکہ اس صورت میں طلاق نہیں ہو گی کوئی اثر نہیں ہو گا۔

آپ کا بھائی/

خالد المصلح

20/10/1425هـ

×

کیا آپ واقعی ان اشیاء کو حذف کرنا چاہتے ہیں جو آپ نے ملاحظہ کیا ہے؟

ہاں، حذف کریں