فتوا فارم کے لئے درخواست

غلط کیپچا
×

بھیجا اور جواب دیا جائے گا

×

افسوس، آپ فی دن ایک فتوی بھی نہیں بھیج سکتے.

احکام میت / موت کی تیاری میں کفن تیار رکھنا

موت کی تیاری میں کفن تیار رکھنا

تاریخ شائع کریں : 2017-05-16 | مناظر : 1501
- Aa +

موت کی تیاری میں کفن تیار کر رکھنے کا کیا حکم ہے؟

تجهيز الكفن استعداداً للموت

شروع کرتا ہوں اللہ کے نام سے جو بڑا مہربان نہایت رحم والا ہیں۔

موت کہ تیاری جو کہ نبی نے اور سلف صالح نے کر رکھی تھی وہ اعمال صالحہ تھے جو کہ موت کے بعد بھی انسان کے ساتھ ہوتے ہیں جیسا کہ اللہ تعالی نے فرمایا: ((ہر نفس اپنی کسب کے حوالے ہے)) [المدثر:۳۸] یعنی اپنے کئے کا قیدی ہے، اور بخاری (۶۵۱۴) اور مسلم (۲۹۶۰) میں سفیان بن عیینہ عن عبد اللہ بن ابو بکر عن انس بن مالک ؓ سے مروی ہے کہ نبی نے فرمایا: "تین چیزیں میت کا تعاقب کرتی ہیں دو لوٹ آتی ہیں اور ایک باقی رہ جاتی ہے: اس کے اہل اس کا مال اور اس کا عمل اس کے پیچھے جاتے ہیں تو اس کے اہل اور مال واپس آجاتے ہیں اور اس کا عمل رہ جاتا ہے" اور جہاں تک کفن اور دیگر حاجات کا تعلق ہے تو اس کو تیار کر رکھنے میں کوئی حرج نہیں بعض سلف نے ایسا کیا لیکن یہ نہیں ہونا چاہئیے کہ مقصد اعلی یہی ہو یا اس میں کسی دوسرے کی حق تلفی ہو۔

آپ کا بھائی/

خالد المصلح

10/04/1425هـ

متعلقہ موضوعات

ملاحظہ شدہ موضوعات

×

کیا آپ واقعی ان اشیاء کو حذف کرنا چاہتے ہیں جو آپ نے ملاحظہ کیا ہے؟

ہاں، حذف کریں