فتوا فارم کے لئے درخواست

غلط کیپچا
×

بھیجا اور جواب دیا جائے گا

×

افسوس، آپ فی دن ایک فتوی بھی نہیں بھیج سکتے.

​زکوٰۃ / وہ شئیرز جو ضائع ہو گئی ہو اس کی زکوٰۃ کا حکم

وہ شئیرز جو ضائع ہو گئی ہو اس کی زکوٰۃ کا حکم

تاریخ شائع کریں : 2017-05-18 | مناظر : 1005
- Aa +

وہ شئیرز جو ضائع ہو گئی ہو اس کی زکوٰۃ کا کیا حکم ہے؟

الزكاة في المساهمات المتعثِّرة

حمد و ثناء کے بعد۔۔۔

بتوفیقِ الٰہی آپ کے سوال کا جواب پیشِ خدمت ہے

اہل علم کے صحیح قول کے مطابق وہ شئیرز جو ضائع ہو گئی ہو اس میں نہ تو ایک بار زکوٰۃ واجب ہے اور نہ کئی بار، اس لئے کہ یہ نہ ملے ہوئے مالِ گم گشتہ کے حکم میں ہے، اور مالِ گم گشتہ اگر انسان کوبکہیں سے یکبارگی اور اچانک سے مل جائے تو یہ بطورِ حادثہ اس کو ملتا ہے لہٰذا اس مال میں اس پر زکوٰۃ واجب نہیں ہے ۔

اب سوال کرنے والا شاید یہ سوال کرلے کہ کیا جاگیری سرمایہ کاری کا قرضہ جو اس نے نو لاکھ مقرر کیا ہے اس مالِ زکوٰۃ پر اثر انداز ہو سکتا ہے جو اس کے قبضہ میں ہے ؟

جواب:  انسان پر جو قرضے ہوتے ہیں وہ تب مالِ زکوٰۃ پر اثر انداز ہوتے ہیں جب وہ مال نقدین (سونا چاندی) میں سے ہو ، لہٰذ امیرا گمان یہ ہے کہ اب آپ کے پاس نقدی بھی ہے اور آپ پر قرضہ بھی ہے ، لہٰذا اب آپ ایسا کریں کہ قرضہ کو حاضر مال میں سے کم کردو، پھراس سے جو باقی رہ جائے تو باقی ماندہ کی زکوٰۃ ادا کردو، اور اگر کچھ بھی باقی نہ بچے تو پھر اس حال میں آپ پر کوئی زکوٰۃ نہیں ۔

×

کیا آپ واقعی ان اشیاء کو حذف کرنا چاہتے ہیں جو آپ نے ملاحظہ کیا ہے؟

ہاں، حذف کریں