×
العربية english francais русский Deutsch فارسى اندونيسي اردو

خدا کی سلام، رحمت اور برکتیں.

پیارے اراکین! آج فتوے حاصل کرنے کے قورم مکمل ہو چکا ہے.

کل، خدا تعجب، 6 بجے، نئے فتوے موصول ہوں گے.

آپ فاٹاوا سیکشن تلاش کرسکتے ہیں جو آپ جواب دینا چاہتے ہیں یا براہ راست رابطہ کریں

شیخ ڈاکٹر خالد الاسلام پر اس نمبر پر 00966505147004

10 بجے سے 1 بجے

خدا آپ کو برکت دیتا ہے

فتاوی جات / لباس اور زینت / بھنویں کلر کرنے کا حکم

اس پیراگراف کا اشتراک کریں WhatsApp Messenger LinkedIn Facebook Twitter Pinterest AddThis

تاریخ شائع کریں:2017-05-20 09:35 AM | مناظر:1792
- Aa +

تمام بھنووں کو کلر کرنے کا کیا حکم ہے ، بایں طور کہ کہ ساری بھنویں ایک ہی کلر کے لگتی ہوں لیکن وہ کلر اصلی نہ ہو؟ ملاحظہ: اس سوال سے مقصود بھنوں کو مختلف ڈیزائن کے ساتھ کلر کرنا نہیں ہے

حكم صبغ الحواجب

جواب

حمد و ثناء کے بعد۔۔۔

 بتوفیقِ الٰہی آپ کے سوال کا جواب پیشِ خدمت ہے:

اس میں کوئی مضائقہ نہیں ہے، اس لئے کہ چیزوں میں اصل حلت ہی ہے جب تک اس کی حرمت مشہور نہ ہو جیسا کہ آپ ایسا کلر استعمال کریں جس کا عام عرف میں استعمال نہ ہو ، یہ اس حدیث کے حکم میں داخل ہے جس کو ابو داؤاور احمد نے ابن عمرؓ سے روایت کی ہے کہ اللہ کے رسولنے ارشاد فرمایاہے: ’’جس نے شہرت و ریا کاری کے لئے کوئی لباس پہنا تو اللہ تعالیٰ اسے قیامت کے دن ذلت و رسوائی کا لباس پہنائے گا‘‘۔ لہٰذا یہ جائز ہے بشرطیکہ اس میں کفار وفسّاق کے ساتھ مشابہت نہ ہو۔

آپ کا بھائی/

خالد المصلح

12/12/1424هـ


آپ چاہیں گے

ملاحظہ شدہ موضوعات

1.

×

کیا آپ واقعی ان اشیاء کو حذف کرنا چاہتے ہیں جو آپ نے ملاحظہ کیا ہے؟

ہاں، حذف کریں