فتوا فارم کے لئے درخواست

غلط کیپچا
×

بھیجا اور جواب دیا جائے گا

×

افسوس، آپ فی دن ایک فتوی بھی نہیں بھیج سکتے.

البيوع / مشترک ملکیت کی مرمت حصوں کے بقدر ہوگی

مشترک ملکیت کی مرمت حصوں کے بقدر ہوگی

تاریخ شائع کریں : 2017-05-25 | مناظر : 997
- Aa +

میری والدہ نے اپنے بھائیوں کے ساتھ ایک بلڈنگ میں شرکت کی ہے ، اور اب وہ اس بلڈنگ کو تعمیر کرنا چاہتے ہیں تو کیا مرد پر دو عورتوں کی بنسبت ڈبل خرچہ آئے گا، یعنی گھر کی مرمت میں وہ ڈبل پیسہ خرچ کریں گے ؟

إصلاح الملك المشترك يكون على قدر الأنصباء

حمد و ثناء کے بعد۔۔۔

 بتوفیقِ الٰہی آپ کے سوال کا جواب پیشِ خدمت ہے:

 کیا آپ کا سوال یہ ہے کہ اگر گھر کی ترمیم و مرمت کی ضرورت پڑ جائے تو مرمت کا خرچہ حصوں کے بقدر آئے گا؟

جواب: جی ہاں ، خرچہ حصوں کے بقدر آئے گا، اگر آپ کی والدہ اس بلڈنگ کے ثلث حصہ کی مالکن ہیں اور ان کے بھائی بھی ثلث حصہ کے مالک ہے تو آپ کی والد اپنے حصہ کے بقدر حصہ ڈالے گی اور اس کا میراث کے ساتھ  کوئی تعلق نہیں ہے، بلکہ خرچہ صرف حصہ کے بقدر ہوگا، اس لئے اگر ورثاء میں سے کسی عورت نے اپنی بہن کا حصہ خریدا تو یہ اس کے حصہ کو زیادہ کر دے گا، یہاں ہم یہ نہیں کہیں گے کہ آپ وہ رقم ادا کریں جو پہلے تھا بلکہ وہ تو اس رقم کو ادا کریں گی جو ترمیم اور مرمت کے وقت تھا آسان لفظوں میں یوں سمجھیں کہ وہ اپنے ثلث حصہ کے بقدر خرچہ ادا کریں گی ، دو ثلث ، جو کہ حقیقت میں کام کے مطابق ہے ۔

×

کیا آپ واقعی ان اشیاء کو حذف کرنا چاہتے ہیں جو آپ نے ملاحظہ کیا ہے؟

ہاں، حذف کریں