فتوا فارم کے لئے درخواست

غلط کیپچا
×

بھیجا اور جواب دیا جائے گا

×

افسوس، آپ فی دن ایک فتوی بھی نہیں بھیج سکتے.

البيوع / میں نے سود پر ایک گھر خریدا ہے اس سے کیسے جان چُھڑاؤں؟

میں نے سود پر ایک گھر خریدا ہے اس سے کیسے جان چُھڑاؤں؟

تاریخ شائع کریں : 2017-07-07 | مناظر : 1072
- Aa +

میں نے سودی قرض کے ذریعہ ایک فلیٹ خریدا ہے اور خریدنے کے بعد اس پر نادم ہوں اور اب میں نے اس سے اپنی جان چُھڑانے کا ارادہ کرلیا ہے، اسلئے میں نے اپنے گھر کو اس نیت سے بیچنے کے لئے پیش کیا ہے کہ بینک کا حق ادا کروں اور دوسرا گھر کرایہ پر لے لوں تاکہ میں کسی ایسے گھر کے خریدنے پر قادر ہو جاؤں جس میں کسی قسم کی شرعی مخالفت نہ ہو ، جبکہ مجھے یہ بھی پتہ ہے کہ اس گھر میں اپنے مال کا ایک خاص حصہ گنوا بیٹھوں گا، اب میرا سوال یہ ہے کہ اس صورت میں شرعی نقطۂ نظر سے کیا أولیٰ و أفضل ہے ؟ گھر کا بچانا جبکہ اس کے بیچنے سے مجھے مالی اعتبار سے بہت نقصان ہوگا ؟ یا اس کا بیچنا چاہے جس طرح کا بھی مجھے نقصان ہو تاکہ اللہ تعالیٰ میری مغفرت فرمائے ؟ ازراہ کرم جلد از جلد مجھے اس کا جواب عنایت فرمائیں ، اللہ تعالیٰ آپ کو بے حد جزائے خیر عطا فرمائے

اشتريت بيتًا بالربا فكيف أتخلَّص منه؟

حمد و ثناء کے بعد۔۔۔

میں اللہ تعالیٰ سے دعاگو ہوں کہ اس سودی معاملہ سے آپ کے توبہ کرنے کو قبول فرمائے، باقی رہا اس سے خلاصی کا سوال تو جہاں تک بینکوں کے عمل سے پتہ چلتا ہے تو وہ زیادتی کے علاوہ رأس المال کی واپسی قبول نہیں کریں گے ، جیسا کہ وہ ان سودی فوائد کے اسقاط کے مقابلہ میں ادائیگی میں عجلت قبول نہیں کرتے جو مدت کے مقابل ہوتے ہیں ۔

لہٰذا مجھے لگ رہا کہ گھر کا بیچنا سود کو لغو کرنے میں مؤثر ہوگا، اس لئے آپ پر اس کا بیچنا لازم نہیں ہے کہ اس میں ضرر بھی ہے اور سود سے سلامتی میں نفع کا نہ حاصل ہونا بھی ہے۔

آپ کا بھائی/

خالد المصلح

13/11/1424هـ

×

کیا آپ واقعی ان اشیاء کو حذف کرنا چاہتے ہیں جو آپ نے ملاحظہ کیا ہے؟

ہاں، حذف کریں