فتوا فارم کے لئے درخواست

غلط کیپچا
×

بھیجا اور جواب دیا جائے گا

×

افسوس، آپ فی دن ایک فتوی بھی نہیں بھیج سکتے.

​زکوٰۃ / عورت کا اپنے بیٹے اور خاوند کو زکوٰۃ دینا

عورت کا اپنے بیٹے اور خاوند کو زکوٰۃ دینا

تاریخ شائع کریں : 2017-05-18 03:03 PM | مناظر : 482
- Aa +

سوال

ایک عورت یہ پوچھنا چاہتی ہے کہ اس کے پاس کچھ زکوٰۃ کی رقم ہے اور وہ چاہتی ہے کہ وہ زکوٰۃ اپنی ضرورتمند اولاد کو دے جبکہ اس عورت کا شوہر بھی تہی دست و زکوٰۃ کا اہل ہے ، اب وہ عورت اپنی اولاد کو جو زکوٰۃ دے رہی ہے تو اس طرح وہ زکوٰۃ اس عورت کے پاس ہی رہ جائے گی اور اس سے پھر ان کے کچھ ضروریات کی چیزیں خرید لے گی، کیا اس طرح کرنا جائز ہے؟

إخراج المرأة الزكاة لولدها وزوجها

جواب

حمد و ثناء کے بعد۔۔۔

اہل علم کے أصح قول کے مطابق اس عورت کا اپنی اولاد اور اپنے خاوند کو زکوٰۃ دینے میں کوئی مضائقہ نہیں ہے ، اس لئے کہ احادیث میں آتا ہے کہ (ایک موقع پر) حضرت عبداللہ بن مسعودؓ کی اہلیہ حضرت زنیبؓ نے رسول کریم سے عرض کیا: اے اللہ کے رسول ! آج آپ نے جب صدقہ کا حکم دیا ، تو میں نے ارادہ کیا کہ اپنے چند زیورات کو صدقہ کرلوں (ابن مسعود کو جب پتہ چلا) تو انہوں نے مجھ سے کہا کہ میں اور میری اولاد باقیوں کی بہ نسبت آپ کے صدقہ کے زیادہ حقدار ہیں ، آنحضرتنے ارشاد فرمایا: "ابن مسعود نے بالکل بجا کہا ہے کہ باقیوں کی بہ نسبت آپ کا خاوند اور آپ کی اولاد زیادہ حقدار ہیں"۔ {رواه البخاري (1462) من حديث أبي سعيد الخدري رضي الله عنه}۔

آپ کا بھائی/

خالد المصلح

18/12/1424هـ

ملاحظہ شدہ موضوعات

×

کیا آپ واقعی ان اشیاء کو حذف کرنا چاہتے ہیں جو آپ نے ملاحظہ کیا ہے؟

ہاں، حذف کریں