فتوا فارم کے لئے درخواست

غلط کیپچا
×

بھیجا اور جواب دیا جائے گا

×

افسوس، آپ فی دن ایک فتوی بھی نہیں بھیج سکتے.

لباس اور زینت / مصنوعی پلکیں لگانے کا حکم

مصنوعی پلکیں لگانے کا حکم

تاریخ شائع کریں : 2017-05-20 09:05 AM | مناظر : 891
- Aa +

سوال

جناب مآب السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ! میرا سوال یہ ہے کہ مصنوعی پلکوں کو طبعی پلکوں پر لگانے کا کیا حکم ہے جبکہ یہ وہ پلکیں نہیں ہیں جو اصلی پلکوں کے کنارے لگائے جاتے ہیں؟

حكم الرموش الصناعية

جواب

حمد و ثناء کے بعد۔۔۔

وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ وبرکاتہ۔

مجھے یہ اندیشہ ہے کہ کہیں اس کا تعلق اس {وصل} ملانے کے ساتھ نہ ہو جس کے فاعل پر اللہ نے لعنت و پھٹکار برسائی ہے ، جیسا کہ حدیث میں آپسے وارد ہوا ہے: ’’اللہ تعالیٰ نے بالوں کے ساتھ دوسری عورت کے بال لگانے والی اور لگوانے والی دونوں پر لعنت برسائی ہے‘‘۔ یہ حدیث صحابہ کی ایک بڑی جماعت سے مروی ہے جن میں حضرت عائشہ ، اسماء اور ابن عمر رضی اللہ عنہم سرفہرست ہیں، اس طرح کی احادیث بخاری ومسلم میں موجود ہیں، باقی یہ بات تو سب پر آشکار ہے کہ اس میں ایک گونا جھوٹ بھی ہوتا ہے، بلکہ بسا اوقات تو اس میں تدلیس اور دھوکہ بھی ہوتا ہے، اس لئے میں اپنی قابل احترام بہنوں کو یہ نصیحت کرتا ہوں کہ اس قسم کے خوبصورتی کے وسائل سے اجتناب کریں اور مباح پر ہی اکتفاء کریں اس لئے کہ "تقوی و پرہیزگاری کا لباس سب سے بہتر ہوتا ہے" [الاعراف: ۲۶

آپ کا بھائی/

أد.خالد المصلح

1 /3/ 1427هـ

ملاحظہ شدہ موضوعات

×

کیا آپ واقعی ان اشیاء کو حذف کرنا چاہتے ہیں جو آپ نے ملاحظہ کیا ہے؟

ہاں، حذف کریں