الاثنين 16 ربيع آخر 1442 هـ
آخر تحديث منذ 7 دقيقة
×
تغيير اللغة
القائمة
العربية english francais русский Deutsch فارسى اندونيسي اردو Hausa
الاثنين 16 ربيع آخر 1442 هـ آخر تحديث منذ 7 دقيقة

نموذج طلب الفتوى

لم تنقل الارقام بشكل صحيح
×

لقد تم إرسال السؤال بنجاح. يمكنك مراجعة البريد الوارد خلال 24 ساعة او البريد المزعج؛ رقم الفتوى

×

عفواً يمكنك فقط إرسال طلب فتوى واحد في اليوم.

کیا عثمانی دور کے سونے کے سکوں پر زکوٰۃ واجب ہے؟

مشاركة هذه الفقرة

کیا عثمانی دور کے سونے کے سکوں پر زکوٰۃ واجب ہے؟

تاريخ النشر : 21 شعبان 1438 هـ - الموافق 18 مايو 2017 م | المشاهدات : 317

میری بہن کے پاس سونے کے کچھ لیرات {عثمانی دور کے سونے کے سکوں} ہیں جن کا وزن تقریبا پچاسی گرام ہے ، اور اس پر تقریبا آٹھ سال گزر گئے ہیں اور اس عرصہ میں اس نے اس کی ایک مرتبہ بھی زکوٰۃ نہیں نکالی، اور نہ ہی اس نے یہ لیرات کبھی پہنے ہیں ، لہٰذا شریعت میں اس کا کیا حکم ہے ؟

هل على هذه الليرات زكاة؟

حمد و ثناء کے بعد۔۔۔

بتوفیقِ الٰہی آپ کے سوال کا جواب پیشِ خدمت ہے:

ان لیرات کی زکوٰۃ واجب ہے ، اس لئے کہ وہ زیورات نہیں ہیں ، اورسونے میں زکوٰۃ کے وجوب کے بارے میں اہل علم کا ذرا بھی اختلاف نہیں ہے ، بلکہ ان کا اختلاف تو صرف اس بات میں ہے کہ عورت جن زیورات کو پہنتی ہے آیا ان میں زکوٰۃ واجب ہے یا نہیں ، لہٰذا آپ پچھلے تمام سالوں کو شمار کرکے ان کی زکوٰۃ ادا کرلیں۔

آپ کا بھائی/

خالد المصلح

07/06/1425هـ

التعليقات (0)

×

هل ترغب فعلا بحذف المواد التي تمت زيارتها ؟؟

نعم؛ حذف